خاموش راستے

Today I am going to share some golden words. I wrote them on my BS convocation day.

خاموش راستے

میں ایک خاموش راستے کا مسافر ہوں
عشق میری منزل، محبّت میرا سفر ہے
میں ایک خاموش راستے کا مسافر ہوں

ایک دن نہ جانے کیا ہوا میں بھٹک گیا
منزل نہ جانے کہا گئی، میں کس راستہ پر چل پڑا
میں ایک خاموش راستے کا مسافر ہوں

ایک مسافر کے انے سے سب کچھ بدل گیا منزل اور میں بھی
وہ نہ جانے محبّت ہے یا عشق مگر کچھ درد سا ہوا
میں ایک خاموش راستے کا مسافر ہوں

خاموش راستوں نے جواب دیا!

آیے عمر! جھوٹ ہے، تیری محبّت، تو اور سب کچھ
پس تو ایک انسان ہے، منزل تیری فنا ہے

عمر کا جواب خواہش کی شکل میں،

اے عشق! تیری ایک نظر میری منزل ہے
میں کہا ہوں، جیسا ہوں، بس تیرا ہوں
میں ایک خاموش راستے کا مسافر ہوں

 

“خاموش مسافر”

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s