عیار دوست کی حقیقت

شاعر

اے شاعر، سبق دوستی کا تم یہ یاد رکھنا
کبھی کسی دوست پے عتماد نہ کرنا

دوست

دوستی کا مقصد کیا اس دنیا میں مکاری کے سوا
مجھ کو تو اچھا لگتا ہے دوسرں کے جذبات سے کھل کر

شاعر

عزت نفس کا تصور نہ ہو تم میں تو کیا کہنا
ہے کوئی حقیقی دوست تو جان لے خدا کو

ہے وہ میرا راز دار ہر چیز میں
جس کا علم نہ ہو خلوت میں کسی کو

خاموش مسافر – ٢٠١٣-٠١-٠٦

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s