مقام فقر و رنگ

مقام فقر و رنگ

تیری رسوائی کے خوف سے ڈرتا ہوں
اب غم بھی کچھ مرض سا بن گیا

ان جانے میں بھی ترا ذکر نہ ہو جے
دعا راب سے تیری خوشی کی کرتا ھو

کبھی ہم سے بھی پوچھو کیا حل ہے تم سے جدا ہو کر
ایک فکیر سا ہو گیا بس تو ایک بار دیدار پے دعا لے

“خاموش مسافر” — ٢٠١٢-١١-٢٩

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s