چاک چاک دامن

چاک چاک دامن

چھپاتا رہا اپنا دامن اپنوں سے اور دنیا سے
کہی میرا چاک چاک دامن آیا نہ ہو جاے سب کو
دنیا کی نظر میں میں اک کامیاب مسافر ہوں
کیا معلوم انکو، یہ مسافر کتنا زخمی، کتنا تھکا ہوا ہے
الہی تجھ سے نہیں کوئی عمل چھپا ہوا
سب ہوتے ہوے بھی نہیں ہے کوئی، تیرے سوا
الہی دے تو ان زخموں کا مرہم یا اتا کر دے خود کو

خاموش مسافر — ٢٠١٢-١٠-٨

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s