صبح و شام پس تیرے ہی نام

کیا صبح و شام ہوتی ہے، زندگی تمام ہوتی ہے
دعا میں پس تیرے ہی نام پے باز اختتام ہوتی ہے

کیا الزام نہیں لگے مجھ پر اس رہ پے چلتے ھوے
سہ لے سب سینے پر کہ کہی تجھ پے الزام نہ اے

ان خاموش منزلوں میں نہ سمجھنا کوئی طوفان نہ اے
زمانے کے جبر اور امتحان مجھ پر صبح و شام اے

نہیں ہے تمنا تجھ سے وعدہ شکنی دنوں جہانوں میں
پس تجھ سےمعافی کا طلب گار ہوں اکرار جرم پر

جدا ھوکر تیری خوشی و صحت کی دعا مانگتا ہوں
دوزخ کے سودے پر بھی تیرے لے جنت مانگتا ھوں

سجدے کے لیے جس لمحے بھی قبلہ روخ ھوا میں
مانگو جو بھی خدا سے ، پس تیرے ہی نام مانگتا ھوں

کیا صبح و شام ہوتی ہے، زندگی تمام ہوتی ہے
دعا میں پس تیرے ہی نام پے باز اختتام ہوتی ہے

(خموش مسافر – ٢٠١٣-٠٧-١٢)

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s