اداس دل اور بے خابی

ہر رہ چھوڑ دی جس پر تمہارا ذکر ہوسکے
عجب دھمک دل پر پڑھی ہے تیرے جانے سے

تم نے کیا زندگی میں موت کا حکم دیا ہے
خود سے دور کر کے بے خاب کر دیا مجھ کو

جہاں کل تک آسمان کو چھونے کی خواہش تھی
اب عجب قید میں ہوں جہاں زمین بھی اجنبی ہے

کبھی دیکھو تو سہی کیسی دھمک دل پر پڑی ہے
ہم خواب ہونے کی تمنا بے خوابی میں جاگتی ہے

دعا میں تیرے حرارت دل اور خوشی کی کرتا ہوں
اداس دل ہی سہی مگر تیری ہر بات مانتا ہوں

خاموش مسافر – ٢٠١٣-٠٩-١٨

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s