محبت کی چاہت

انسان کے وجود دو حصوں میں تقسیم کیا جا سکتا ہے- ایک اس کا معدی وجود اور ایک اس کا روحانی وجود ہے- انسان کے وجود کو اس کی روح انتظامی اختیارات رکھتی ہے جس کی وجہ سے انسان کے روحانی وجود نے انسان کے معدی وجود پر دو انتظامی مرکز بنا رکھے ہیں جوکہ دل اور دماغ ہیں- مرکز کے کمزوں ہونے پر معدی وجود کا قبضہ ہو جاتا ہے اور مرکز کو واپس حاصل کرنے کے لیے محنت کرنا ہوتی ہے-

کبھی اپ مرکری کے ساتھ وقت ضرور گزارے اور خاص طور پر مرکری کو دو حصوں میں تقسیم کر کے دیکھے تو آپ کو معلوم ہو گا کہ وہ ایک دوسروں سے جدا نہیں رہ سکتے- روکاوٹ ختم ہوتے ہی اپس میں ملنے کی کوشش کرتے ہیں- کیوں کہ یہ وہ چاہت ہے جو رب نے مرکری میں رکھ دی ہے کہ جدا کوئی کر دے اور پھر مل سکتے ہوں تو فوران ملنے کی کوشش کرتا ہے-

کچھ یہی معملا انسان کے ساتھ رب نے کر رکھا ہے- انسان کی روح کو اپنے نور سے تشکیل دی اور جدا کرتے ہوے روح میں محبت کی چاہت بھی رکھ دی- اور محبت کی چاہت بھی ایسی کہ جو محبوب کو تلاش کرتی ہے اور محبوب کے حضور رہنا چاہتی ہے- باز اوقات انسان خدا کے وجود کو کسی انسان میں پا لیتا ہے جس کی وجہ سے اس کو انسان سے محبت ہو جاتی ہے کیونکہ انسان میں پاۓ جانے والا نور بھی رب کا عکس ہے-

انسان محبت کا دعوے دار تو بن جاتا ہے مگر روحانی وجود کی محبت کا نہیں بلکہ معدی وجود کا محبوب ہوتا ہے- انسان کو روحانی وجود کی محبت پانے کے لیے بہت سی ریاذتیں درکار ہیں جس میں انسان اپنی خواہشات کی نفی کرتا ہے، آنا کے بوت شکنی کرتا ہے، رب کی مخلوق کی عزت کرتا ہے- تاکہ انسان اپنے معدی وجود کی حرکات کو اپنے روحانی وجود کی خواہشات کے مطابق کر سکے- روحانی وجود کی خواہش صرف رب کی رزہ اور محبوب کے حاضر حضور رہنا ہے، جبکہ معدی وجود کی خواہش معدی وجود کی چاہت ہے جو انسان کو انسان سے دور کرنے اور لڑوانے کا سبب بن سکتی ہے-

محبت کی چاہت کو روحانی وجود کے تقاضون کے مطابق رکھے تاکہ دوکھا نہ ہو پاۓ- جب کہ معدی وجود سے پائی جانے والی محبت میں نقصان ہی نقصان ہوتا ہے- کیونکہ روحانی وجود کو روحانی وجود کی چاہت رہتی ہے جو معدی وجود کے ہونے نہ ہونے سے فرق نہیں پڑتا-

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s