آداب محبت

بات تو سچ ہے مگر اس نے بڑی پذیری کی
سرے بازار اس نے میری بڑی رسوائی کی

اعتراف جرم تھا میرا اس سے محبت کا
سچے جذبے پر اس نے بڑی رسوائی کی

نجانے کیسے کیسے الزام لگے مجھ پر
محبت کے امتحان میں ہر دم سجدہ کیا

کبھی کسی روز اسکو میری محبت کا یکین ہو
پس کبھی کوئی گوشہ محبت اسکے دل میں ہو

خاموش مسافر — ٢٠١٤-١٠-٣٠

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s